حصار شہر ملا دشت کا مزہ نہ ملا

شاذ تمکنت

حصار شہر ملا دشت کا مزہ نہ ملا

شاذ تمکنت

MORE BY شاذ تمکنت

    حصار شہر ملا دشت کا مزہ نہ ملا

    جنوں کے دور میں بھی کوئی مشغلہ نہ ملا

    اب اس گلاب نے کانٹے کی اک چبھن بھی نہ دی

    ملا ضرور وہ مجھ سے مگر خفا نہ ملا

    نہ تیرے قد کی کوئی بحر خوش خرام ملی

    غزل کا ذکر ہی کیا کوئی قافیہ نہ ملا

    جو بس چلے تو وہ سمٹا لے ہر نموئے بدن

    حیا سے اپنی کوئی یوں تھکا ہوا نہ ملا

    بھنور کی چیخ بلاتی رہی مگر اے شاذؔ

    اندھیری رات تھی موجوں کا نقش پا نہ ملا

    مآخذ:

    • Book: Kulliyat-e-Shaz Tamkanat (Pg. 518)
    • Author: Shaz Tamkanat
    • مطبع: Educational Publishing House (2004)
    • اشاعت: 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites