ہو نہ بیتاب ادا تمہاری آج

مومن خاں مومن

ہو نہ بیتاب ادا تمہاری آج

مومن خاں مومن

MORE BYمومن خاں مومن

    ہو نہ بیتاب ادا تمہاری آج

    ناز کرتی ہے بے قراری آج

    اڑ گیا خاک پر غبار اپنا

    ہو گئی خاک خاکساری آج

    نزع ہے اور روز وعدۂ وصل

    ہے بہر طور دم شماری آج

    مانع قتل کیوں ہوا دشمن

    جان ہی جائے گی ہماری آج

    تیرے آتے ہی دم میں دم آیا

    ہو گئی یاس امیدواری آج

    کوئی بھینچے ہے دل کو پہلو میں

    کس نے کی اس سے ہم کناری آج

    اس کے شکوے سے ہے اثر ظاہر

    کچھ تو کہتی ہے آہ و زاری آج

    اک نئی آرزو کا خون ہوا

    ہم ہیں اور تازہ سوگواری آج

    چھٹ گئے مر کے نیش ہجراں سے

    کام آیا ہے زخم کاری آج

    بیکسی کیوں ہے نعش پر مجمع

    کیا ہوئی تو مری پیاری آج

    بھولے حضرت نصیحت اے ناصح

    ہے کسی کی تو یادگاری آج

    مومنؔ اس بت کو دیکھ آہ بھری

    کیا ہوا لاف دین داری آج

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY