ہونٹوں پہ محبت کے فسانے نہیں آتے

بشیر بدر

ہونٹوں پہ محبت کے فسانے نہیں آتے

بشیر بدر

MORE BY بشیر بدر

    ہونٹوں پہ محبت کے فسانے نہیں آتے

    ساحل پہ سمندر کے خزانے نہیں آتے

    پلکیں بھی چمک اٹھتی ہیں سونے میں ہماری

    آنکھوں کو ابھی خواب چھپانے نہیں آتے

    دل اجڑی ہوئی ایک سرائے کی طرح ہے

    اب لوگ یہاں رات جگانے نہیں آتے

    یارو نئے موسم نے یہ احسان کیے ہیں

    اب یاد مجھے درد پرانے نہیں آتے

    اڑنے دو پرندوں کو ابھی شوخ ہوا میں

    پھر لوٹ کے بچپن کے زمانے نہیں آتے

    اس شہر کے بادل تری زلفوں کی طرح ہیں

    یہ آگ لگاتے ہیں بجھانے نہیں آتے

    احباب بھی غیروں کی ادا سیکھ گئے ہیں

    آتے ہیں مگر دل کو دکھانے نہیں آتے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    بھارتھی وشواناتھن

    بھارتھی وشواناتھن

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY