ہوئے ہو کس لئے برہم عزیزم

تسنیم عابدی

ہوئے ہو کس لئے برہم عزیزم

تسنیم عابدی

MORE BYتسنیم عابدی

    ہوئے ہو کس لئے برہم عزیزم

    سر تسلیم ہے لو خم عزیزم

    چراغ حجرۂ جاں کی خبر لو

    لبوں پر آ گیا ہے دم عزیزم

    نہیں بھرتا یہ زخم ہجر اپنا

    لگاؤ وصل کا مرہم عزیزم

    تم آتے ہو تو دم آتا ہے گویا

    تم آتے ہو مگر کم کم عزیزم

    نبود و بود کی اس کشمکش میں

    عجب ہے حالت پیہم عزیزم

    تو ہی تو ہے میں قطرہ تو سمندر

    یہ من آنم کہ من دانم عزیزم

    ہمی ہیں کشتگان وقت رفتہ

    عزیز از جان ہیں یہ غم عزیزم

    وجود رفتۂ رفتار منزل

    سرائے ہستیٔ عالم عزیزم

    خمار تشنہ کامی چشم گوئم

    شنیدن عکس جام جم عزیزم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے