ابن مریم ہوا کرے کوئی

مرزا غالب

ابن مریم ہوا کرے کوئی

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    ابن مریم ہوا کرے کوئی

    میرے دکھ کی دوا کرے کوئی

    شرع و آئین پر مدار سہی

    ایسے قاتل کا کیا کرے کوئی

    چال جیسے کڑی کمان کا تیر

    دل میں ایسے کے جا کرے کوئی

    بات پر واں زبان کٹتی ہے

    وہ کہیں اور سنا کرے کوئی

    بک رہا ہوں جنوں میں کیا کیا کچھ

    کچھ نہ سمجھے خدا کرے کوئی

    نہ سنو گر برا کہے کوئی

    نہ کہو گر برا کرے کوئی

    روک لو گر غلط چلے کوئی

    بخش دو گر خطا کرے کوئی

    کون ہے جو نہیں ہے حاجت مند

    کس کی حاجت روا کرے کوئی

    کیا کیا خضر نے سکندر سے

    اب کسے رہنما کرے کوئی

    جب توقع ہی اٹھ گئی غالبؔ

    کیوں کسی کا گلہ کرے کوئی

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    فریدہ خانم

    فریدہ خانم

    شمونا رائے بسواس

    شمونا رائے بسواس

    کندن لال سہگل

    کندن لال سہگل

    اقبال بانو

    اقبال بانو

    نامعلوم

    نامعلوم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY