اک اجنبی خیال میں خود سے جدا رہا

ساغر مہدی

اک اجنبی خیال میں خود سے جدا رہا

ساغر مہدی

MORE BYساغر مہدی

    اک اجنبی خیال میں خود سے جدا رہا

    نیند آ گئی تھی رات مگر جاگتا رہا

    سنگین حادثوں میں بھی ہنستی رہی حیات

    پتھر پہ اک گلاب ہمیشہ کھلا رہا

    دنیا کو اس نگاہ نے دیوانہ کر دیا

    میں وہ ستم ظریف کہ بس دیکھتا رہا

    اک اجنبی مہک سی لہو میں رچی رہی

    نغمہ سا جان و تن میں کوئی گونجتا رہا

    اب جا کے یہ کھلا کہ ہر اک شخص دوستو

    ہر شخص کو لباس سے پہچانتا رہا

    فکر سخن میں رات جو آیا خیال میرؔ

    تا دیر ڈائری پہ قلم کانپتا رہا

    ساغرؔ تمام عمر کی گردش کے باوجود

    میں اس نگاہ ناز سے نا آشنا رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY