اک پل میں اک صدی کا مزا ہم سے پوچھئے

خمارؔ بارہ بنکوی

اک پل میں اک صدی کا مزا ہم سے پوچھئے

خمارؔ بارہ بنکوی

MORE BY خمارؔ بارہ بنکوی

    اک پل میں اک صدی کا مزا ہم سے پوچھئے

    دو دن کی زندگی کا مزا ہم سے پوچھئے

    بھولے ہیں رفتہ رفتہ انہیں مدتوں میں ہم

    قسطوں میں خودکشی کا مزا ہم سے پوچھئے

    آغاز عاشقی کا مزا آپ جانئے

    انجام عاشقی کا مزا ہم سے پوچھئے

    جلتے دیوں میں جلتے گھروں جیسی ضو کہاں

    سرکار روشنی کا مزا ہم سے پوچھئے

    وہ جان ہی گئے کہ ہمیں ان سے پیار ہے

    آنکھوں کی مخبری کا مزا ہم سے پوچھئے

    ہنسنے کا شوق ہم کو بھی تھا آپ کی طرح

    ہنسئے مگر ہنسی کا مزا ہم سے پوچھئے

    ہم توبہ کر کے مر گئے بے موت اے خمارؔ

    توہین مے کشی کا مزا ہم سے پوچھئے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    خمارؔ بارہ بنکوی

    خمارؔ بارہ بنکوی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY