اک سمندر کے حوالے سارے خط کرتا رہا

ولاس پنڈت مسافر

اک سمندر کے حوالے سارے خط کرتا رہا

ولاس پنڈت مسافر

MORE BYولاس پنڈت مسافر

    اک سمندر کے حوالے سارے خط کرتا رہا

    وہ ہمارے ساتھ اپنے غم غلط کرتا رہا

    کیا کسی بدلاؤ سے یہ زندگی بدلی کبھی

    کیوں نئی وہ روز اپنی شخصیت کرتا رہا

    اس کی تنہائی کا عالم دوستو مت پوچھیے

    گھر کی ہر دیوار سے وہ مصلحت کرتا رہا

    تھی خبر اب اپنے حق میں کچھ نہیں باقی رہا

    جان کر میں کاغذوں پر دستخط کرتا رہا

    ہاں اسے شاعر زمانہ کہہ رہا ہے ان دنوں

    جو دوانہ اپنے غم کی تربیت کرتا رہا

    آج سمجھا ٹھوکروں کے بعد بھی ہے زندگی

    کیوں عطا مجھ کو مسافرؔ یہ صفت کرتا رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY