عرفان کی فضا میں فرزانگی سے دامن

مجیب ایمان

عرفان کی فضا میں فرزانگی سے دامن

مجیب ایمان

MORE BYمجیب ایمان

    عرفان کی فضا میں فرزانگی سے دامن

    آئینہ صبح کو ہو شب کی نمی سے دامن

    جذبات کی جلو میں شائستگی سے دامن

    سرچشمہ زندگی کا ہو زندگی سے دامن

    احساس کی خلش سے تنہائی کی تپش سے

    رشتوں کی تازگی ہو تر دامنی سے دامن

    شیشہ گروں کی قسمت ابر رواں کی قربت

    شعلہ فشاں ہو ورنہ شیشہ گری سے دامن

    زر کی ہوس سے خالی روحانیت کا پیکر

    مغرب کی وادیوں میں وابستگی سے دامن

    ایمانؔ کی شعاعیں جلوہ نما ہوں جس دم

    مینار روشنی کا ہو روشنی سے دامن

    مأخذ :
    • کتاب : Shora-e-London (Pg. 39)
    • Author : Jauhar Zahiri
    • مطبع : Books From India (U.K) Ltd. 45, Museum Street,Londan W.C-1 (1985)
    • اشاعت : 1985

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY