اس درجہ بھاگ دوڑ کے اتنا کمائیں گے

جلیل ارشد خاں راشد

اس درجہ بھاگ دوڑ کے اتنا کمائیں گے

جلیل ارشد خاں راشد

MORE BYجلیل ارشد خاں راشد

    اس درجہ بھاگ دوڑ کے اتنا کمائیں گے

    ہم زندگی کی شام تلک گھر بنائیں گے

    پہلے تو زندگی کی بہت چاہ تھی ہمیں

    کس کو خبر تھی راہ میں یہ موڑ آئیں گے

    کہتے ہیں کٹ ہی جاتی ہے عمر دراز بھی

    سو مطمئن ہیں اپنے بھی دن بیت جائیں گے

    محرومیوں کے داغ نا آسودہ خواہشیں

    ان سب کے ساتھ ہم تجھے کیا منہ دکھائیں گے

    مر کر بھی خواہشوں سے نہ مل پائے گی نجات

    ہم خواہش بہشت کے چکر میں آئیں گے

    اللہ مہربان بھی عادل بھی ہے جلیلؔ

    چلئے اسی سے چل کے ذرا لو لگائیں گے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY