اس دور کے اثر کا جو پوچھو بیاں نہیں

شیخ ظہور الدین حاتم

اس دور کے اثر کا جو پوچھو بیاں نہیں

شیخ ظہور الدین حاتم

MORE BYشیخ ظہور الدین حاتم

    اس دور کے اثر کا جو پوچھو بیاں نہیں

    ہے کون سی زمیں کہ جہاں آسماں نہیں

    اس درجہ دلبروں سے کوئی رسم دلبری

    دل ہاتھ پر لیے ہوں کوئی دل ستاں نہیں

    افسردہ دل تھا اب تو ہوا غم سے مردہ دل

    جیتا ہوں دیکھنے میں ولے مجھ میں جاں نہیں

    آداب صحبتوں کا کوئی ہم سے سیکھ لے

    پر کیا کروں کہ طالب صحبت یہاں نہیں

    دل جل کے بجھ گیا ہے کسی نے خبر نہ لی

    ہم سوختہ دلوں کا کوئی قدرداں نہیں

    ہے کل کی بات سب کے دلوں میں عزیز تھا

    پر ان دنوں تو ایک بھی دل مہرباں نہیں

    ایسی ہوا بہی کہ ہے چاروں طرف فساد

    جز سایۂ خدا کہیں دارالاماں نہیں

    عالم کی ہے گی نرخ الٰہی سے زندگی

    تس پر بھی دیکھتا ہوں کہ بہتوں کو ناں نہیں

    حاتمؔ خموش لطف سخن کچھ نہیں رہا

    بکتا عبث پھرے ہے کوئی نکتہ داں نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY