اس لیے دل برا کیا ہی نہیں

فیضی

اس لیے دل برا کیا ہی نہیں

فیضی

MORE BYفیضی

    اس لیے دل برا کیا ہی نہیں

    زندگی میرا فیصلہ ہی نہیں

    اس قدر شور تھا مرے سر میں

    اپنی آواز پر رکا ہی نہیں

    بڑی خواہش تھی مجھ کو ہونے کی

    ہو گیا ہوں تو کچھ ہوا ہی نہیں

    ظلم کرتا ہوں ظلم سہتا ہوں

    میں کبھی چین سے رہا ہی نہیں

    پڑ گیا ہے خدا سے کام مجھے

    اور خدا کا کوئی پتہ ہی نہیں

    توڑ ڈالو یہ ہاتھ پاؤں مرے

    جسم کا تو مقابلہ ہی نہیں

    تم کہاں ہو ذرا صدا تو دو

    اس سے آگے تو راستہ ہی نہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اس لیے دل برا کیا ہی نہیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY