اس لیے جفاؤں پر مجھ کو مسکرانا تھا

نسیم شاہجہانپوری

اس لیے جفاؤں پر مجھ کو مسکرانا تھا

نسیم شاہجہانپوری

MORE BYنسیم شاہجہانپوری

    اس لیے جفاؤں پر مجھ کو مسکرانا تھا

    اور اس ستمگر کا حوصلہ بڑھانا تھا

    آنسوؤں کی قیمت جب موتیوں سے بڑھ کر تھی

    وہ مری محبت کا اور ہی زمانا تھا

    جب ستم سے ڈرتے تھے اب کرم سے ڈرتے ہیں

    یہ بھی اک زمانہ ہے وہ بھی اک زمانا تھا

    زندگی نے لوٹا ہے زندگی کو دانستہ

    موت سے شکایت کیا موت کا بہانا تھا

    وہ بھی دور گزرا ہے جب مری وفاؤں سے

    آپ ہی نہیں تنہا بدگماں زمانا تھا

    اے نسیمؔ گلشن میں جب بہار کے دن تھے

    دوش پر فضاؤں کے میرا آشیانا تھا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اس لیے جفاؤں پر مجھ کو مسکرانا تھا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY