عشق کرنے کا ارادہ ہو تو ہم سے ملنا

رحمان خاور

عشق کرنے کا ارادہ ہو تو ہم سے ملنا

رحمان خاور

MORE BYرحمان خاور

    عشق کرنے کا ارادہ ہو تو ہم سے ملنا

    تم کو خود سے کبھی ملنا ہو تو ہم سے ملنا

    قابل دید ہیں سب زخم ہمارے دل کے

    آپ کو شوق تماشا ہو تو ہم سے ملنا

    سایۂ گل میں ملاقات رہے گی تم سے

    موسم گل میں جو تنہا ہو تو ہم سے ملنا

    بے سبب ہم بھی کسی سے نہیں ملتے صاحب

    تم بھی ملنے کی تمنا ہو تو ہم سے ملنا

    وعدۂ وصل تو لیتے نہیں تم سے لیکن

    اتفاقاً ادھر آنا ہو تو ہم سے ملنا

    اپنی آنکھوں کے لئے خواب کہاں فرقت میں

    خواب تم نے کوئی دیکھا ہو تو ہم سے ملنا

    اپنا در سب پہ کھلا ہے کوئی اپنا ہو کہ غیر

    کسی درویش سے ملنا ہو تو ہم سے ملنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY