اتنے اچھے ہو کہ بس توبہ بھلی

مضطر خیرآبادی

اتنے اچھے ہو کہ بس توبہ بھلی

مضطر خیرآبادی

MORE BYمضطر خیرآبادی

    اتنے اچھے ہو کہ بس توبہ بھلی

    تم تو ایسے ہو کہ بس توبہ بھلی

    رسم عشق غیر اور میں یہ بھی خوب

    ایسی کہتے ہو کہ بس توبہ بھلی

    میری مے نوشی پہ ساقی کہہ اٹھا

    اتنی پیتے ہو کہ بس توبہ بھلی

    وقت آخر اور یہ قول وفا

    دم وہ دیتے ہو کہ بس توبہ بھلی

    غیر کی بات اپنے اوپر لے گئے

    ایسی سمجھے ہو کہ بس توبہ بھلی

    میں بھی ایسا ہوں کہ خالق کی پناہ

    تم بھی ایسے ہو کہ بس توبہ بھلی

    کہتے ہیں مضطرؔ وہ مجھ کو دیکھ کر

    یوں تڑپتے ہو کہ بس توبہ بھلی

    مأخذ :
    • کتاب : Khirman (Part-1) (Pg. 234)
    • Author : Muztar Khairabadi
    • مطبع : Javed Akhtar (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY