جاگتا ہوں میں ایک اکیلا دنیا سوتی ہے

شہریار

جاگتا ہوں میں ایک اکیلا دنیا سوتی ہے

شہریار

MORE BYشہریار

    جاگتا ہوں میں ایک اکیلا دنیا سوتی ہے

    کتنی وحشت ہجر کی لمبی رات میں ہوتی ہے

    یادوں کے سیلاب میں جس دم میں گھر جاتا ہوں

    دل دیوار ادھر جانے کی خواہش ہوتی ہے

    خواب دیکھنے کی حسرت میں تنہائی میری

    آنکھوں کی بنجر دھرتی میں نیندیں بوتی ہے

    خود کو تسلی دینا کتنا مشکل ہوتا ہے

    کوئی قیمتی چیز اچانک جب بھی کھوتی ہے

    عمر سفر جاری ہے بس یہ کھیل دیکھنے کو

    روح بدن کا بوجھ کہاں تک کب تک ڈھوتی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : sooraj ko nikalta dekhoon (Pg. 673)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY