جاں فشانی کا واں حساب عبث

سید یوسف علی خاں ناظم

جاں فشانی کا واں حساب عبث

سید یوسف علی خاں ناظم

MORE BYسید یوسف علی خاں ناظم

    جاں فشانی کا واں حساب عبث

    جو کہو اس کا ہے جواب عبث

    ماہتاب اور کتاں کا عالم ہے

    عارض دوست پر نقاب عبث

    قفل در کی کلید نا پیدا

    اب تمناے فتح باب عبث

    زلف پر خم ہوا سے کیوں نہ ہلے

    آپ کھاتے ہیں پیچ و تاب عبث

    خط اسے بھیجنا ضرور مگر

    دوست سے خواہش جواب عبث

    میرے اشعار سب بیاضی ہیں

    ہم نشیں فکر انتخاب عبث

    ہے ہماری نظر میں حرمت مے

    پیچش اہل احتساب عبث

    یاں نہیں کفر‌ و دین خوف و رجا

    لطف بے فائدہ عتاب عبث

    نہ ثواب اس میں ہے نہ اس میں اثر

    صبر بے ہودہ اضطراب عبث

    وعدہ اس نے کیا تو کیا ناظمؔ

    عبث اے خانماں خراب عبث

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY