جاتا ہے جو گھروں کو وہ رستہ بدل دیا

فاطمہ حسن

جاتا ہے جو گھروں کو وہ رستہ بدل دیا

فاطمہ حسن

MORE BYفاطمہ حسن

    جاتا ہے جو گھروں کو وہ رستہ بدل دیا

    آندھی نے میرے شہر کا نقشہ بدل دیا

    پہچان جن سے تھی وہ حوالے مٹا دیے

    اس نے کتاب ذات کا صفحہ بدل دیا

    کتنا عجیب ہے وہ مصور کہ غور سے

    دیکھے جو خد و خال تو چہرہ بدل دیا

    وہ کھیل تھا مذاق تھا یا خوف تھا کوئی

    اک چال چل کے اس نے جو مہرہ بدل دیا

    کرتا رہا اسیری کے احساس کو شدید

    زنجیر کھول دی کبھی پہرا بدل دیا

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    jata hai jo gharon ko wo rasta badal diya عذرا نقوی

    مأخذ :
    • کتاب : yadain bhi ab khwab hoin (Pg. 77)
    • Author : faatima hasan
    • مطبع : B-155 Block -5 gulshan iqbaal karachi (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY