جب بھی تری قربت کے کچھ امکاں نظر آئے

صادق نسیم

جب بھی تری قربت کے کچھ امکاں نظر آئے

صادق نسیم

MORE BYصادق نسیم

    جب بھی تری قربت کے کچھ امکاں نظر آئے

    ہم خوش ہوئے اتنے کہ پریشاں نظر آئے

    دیکھوں تو ہر اک حسن میں جھلکیں ترے انداز

    سوچوں تو فقط گردش دوراں نظر آئے

    ٹوٹا جو فسون نگہ شوق تو دیکھا

    صحرا تھے جو نشے میں گلستاں نظر آئے

    کانٹوں کے دلوں میں بھی وہی زخم تھے لیکن

    پھولوں نے سجائے تو نمایاں نظر آئے

    اک اشک بھی نظر غم جاناں کو نہیں پاس

    ہم آج بہت بے سر و ساماں نظر آئے

    جو راہ تمنا کے ہر اک موڑ پہ چپ تھے

    جب دار پہ پہنچے تو غزل خواں نظر آئے

    کیا جانئے کیا ہو گیا ارباب نظر کو

    جس شہر کو دیکھیں وہی ویراں نظر آئے

    کیا روپ نگاہوں میں رچا بیٹھے کہ ان کو

    گلشن نظر آئے نہ بیاباں نظر آئے

    اک عمر سے اس موڑ پہ بیٹھے ہیں جہاں پر

    اک پل کا گزرنا بھی نہ آساں نظر آئے

    صادقؔ کی نگاہوں کو ہی ٹھہراؤ نہ مجرم

    آئینے ہر اک دور میں حیراں نظر آئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY