جب کہا تیر تری آنکھ نے اکثر مارا

مضطر خیرآبادی

جب کہا تیر تری آنکھ نے اکثر مارا

مضطر خیرآبادی

MORE BYمضطر خیرآبادی

    جب کہا تیر تری آنکھ نے اکثر مارا

    چتونیں پھیر کے بولے کہ برابر مارا

    قدر کچھ بھی مرے دل کی بت کافر نے نہ کی

    زلف پیچاں سے جو الجھا تو مرے سر مارا

    جان بے موت خدا بھی نہیں لیتا لیکن

    تو نے بے موت ہی لوگوں کو ستم گر مارا

    چند ذرے میری مٹی کے فقط ہاتھ آئے

    دشت غربت کے بگولوں نے جو چکر مارا

    اک مسلمان کا دل توڑ دیا کیا کہنا

    اپنے نزدیک بڑا آپ نے کافر مارا

    مضطرؔ ایسا کوئی اب تک نہ ہو اور نہ ہو

    موت نے ہائے عبث داغ سخنور مارا

    مأخذ :
    • کتاب : Khirman (Part-1) (Pg. 253)
    • Author : Muztar Khairabadi
    • مطبع : Javed Akhtar (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY