جب کہ سر پر وبال آتا ہے

امداد علی بحر

جب کہ سر پر وبال آتا ہے

امداد علی بحر

MORE BYامداد علی بحر

    جب کہ سر پر وبال آتا ہے

    پیچ میں بال بال آتا ہے

    کب پیام وصال آتا ہے

    خواب ہے جو خیال آتا ہے

    تیغ عرفاں سے روح بسمل ہے

    حال پر اپنے حال آتا ہے

    شل ہے ہر چند پنچۂ مژگاں

    پر کلیجا نکال آتا ہے

    کیا عجب عشق ہو جو پیری میں

    دودھ میں بھی ابال آتا ہے

    خوب چلتی ہے ناؤ کاغذ کی

    گھر میں قاضی کے مال آتا ہے

    ڈھیر ہے دل میں اب کدورت کا

    مٹی لینے کلال آتا ہے

    چل نکلتی ہے کشتی اعمال

    عرق انفعال آتا ہے

    ہجر کے دن یوں ہی گزرتے ہیں

    ماہ جاتے ہیں سال آتا ہے

    تیرے آنکھوں کے سامنے صیاد

    ذبح ہونے غزال آتا ہے

    جس نے اس کی گلی میں پھل پایا

    کھا کے پتھر نہال آتا ہے

    سر کٹا کر شہید ہوتے ہیں

    عمر کھو کر کمال آتا ہے

    نہ ملے گا سوا مقدر سے

    جہل ہے جا ملال آتا ہے

    بہر زر گل ہے پلۂ میزاں

    تل کے کانٹے پہ مال آتا ہے

    بحرؔ کی سن کے عارفانہ غزل

    شاہ دریا کو حال آتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY