جب لگیں زخم تو قاتل کو دعا دی جائے

جاں نثاراختر

جب لگیں زخم تو قاتل کو دعا دی جائے

جاں نثاراختر

MORE BY جاں نثاراختر

    جب لگیں زخم تو قاتل کو دعا دی جائے

    ہے یہی رسم تو یہ رسم اٹھا دی جائے

    دل کا وہ حال ہوا ہے غم دوراں کے تلے

    جیسے اک لاش چٹانوں میں دبا دی جائے

    انہیں گل رنگ دریچوں سے سحر جھانکے گی

    کیوں نہ کھلتے ہوئے زخموں کو دعا دی جائے

    کم نہیں نشے میں جاڑے کی گلابی راتیں

    اور اگر تیری جوانی بھی ملا دی جائے

    ہم سے پوچھو کہ غزل کیا ہے غزل کا فن کیا

    چند لفظوں میں کوئی آگ چھپا دی جائے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    جاں نثاراختر

    جاں نثاراختر

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    جب لگیں زخم تو قاتل کو دعا دی جائے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY