جڑاؤ چوڑیوں کے ہاتھوں میں پھبن کیا خوب

امداد علی بحر

جڑاؤ چوڑیوں کے ہاتھوں میں پھبن کیا خوب

امداد علی بحر

MORE BYامداد علی بحر

    جڑاؤ چوڑیوں کے ہاتھوں میں پھبن کیا خوب

    بھرے بھرے ترے بازو پہ نورتن کیا خوب

    کھجوری چوٹی کے قربان واہ کیا کہنا

    نثار پریوں کے مو بہ مو شکن کیا خوب

    نئی جوانی کا جوش اور ابھار سینے کا

    دوشالہ ڈھلکا ہوا سر سے بانکپن کیا خوب

    عجب بہار ہے بیلوں کی اور بوٹوں کی

    پری دوپٹا ترا غیرت چمن کیا خوب

    ازار بند کے لچھے کا واہ رے عالم

    گداز رانوں پہ پاجامے کی شکن کیا خوب

    جو پہنا اچھا برا تو نے اترا بن بن کر

    ہر ایک چیز میں جانی سجیلا پن کیا خوب

    گلاب سے ترے گال اور آنکھیں نرگس سے

    برنگ غنچۂ لالہ لب و دہن کیا خوب

    نظر پھسلتے ہی واللہ میری آنکھوں میں خاک

    کہ صاف صاف ہے آئینے سا بدن کیا خوب

    خدا نے نور کے سانچے میں تجھ کو ڈھالا ہے

    جو دیکھتا ہے وہ کہتا ہے یہ سخن کیا خوب

    بیان حسن کرے تیرا بحرؔ کس منہ سے

    ترا بناؤ ترے چھب تری پھبن کیا خوب

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY