جھوم کر بدلی اٹھی اور چھا گئی

اختر شیرانی

جھوم کر بدلی اٹھی اور چھا گئی

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    جھوم کر بدلی اٹھی اور چھا گئی

    ساری دنیا پر جوانی آ گئی

    آہ وہ اس کی نگاہ مے فروش

    جب بھی اٹھی مستیاں برسا گئی

    گیسوئے مشکیں میں وہ روئے حسیں

    ابر میں بجلی سی اک لہرا گئی

    عالم مستی کی توبہ الاماں

    پارسائی نشہ بن کر چھا گئی

    آہ اس کی بے نیازی کی نظر

    آرزو کیا پھول سی کمھلا گئی

    ساز دل کو گدگدایا عشق نے

    موت کو لے کر جوانی آ گئی

    پارسائی کی جوانمرگی نہ پوچھ

    توبہ کرنی تھی کہ بدلی چھا گئی

    اخترؔ اس جان تمنا کی ادا

    جب کبھی یاد آ گئی تڑپا گئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY