جس جگہ جو خوش نشیں آیا نظر رہنے دیا

عبدالسلام عاصم

جس جگہ جو خوش نشیں آیا نظر رہنے دیا

عبدالسلام عاصم

MORE BYعبدالسلام عاصم

    جس جگہ جو خوش نشیں آیا نظر رہنے دیا

    ہم نے روشن دان میں چڑیوں کا گھر رہنے دیا

    مل کے جو بچھڑے انہیں جانے سے روکا بھی نہیں

    اور جو ساتھ آئے ان کو ہم سفر رہنے دیا

    جس کے ڈر کی کرتے پھرتے ہیں تجارت اہل دیں

    ہم نے اس کے خوف سے لرزیدہ شر رہنے دیا

    درد دل کو بھی دواؤں سے ہی بہلاتے رہے

    بد دعاؤں کو ہمیشہ بے اثر رہنے دیا

    ہر سحر تجھ کو بھلانے کے لئے دفتر گیا

    اور تری یادوں کو مہماں رات بھر رہنے دیا

    جس میں ہاتھوں کو مرے تھامے نظر آتے ہو تم

    بس اسی تصویر کو دیوار پر رہنے دیا

    سب بدل کر رکھ دیا ہم نے ان آنکھوں کے لئے

    ہاں مگر منظر بہ منظر چشم تر رہنے دیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY