جس کو دیکھو خواب میں الجھا بیٹھا ہے

مشکور حسین یاد

جس کو دیکھو خواب میں الجھا بیٹھا ہے

مشکور حسین یاد

MORE BYمشکور حسین یاد

    جس کو دیکھو خواب میں الجھا بیٹھا ہے

    اپنے ہی پایاب میں الجھا بیٹھا ہے

    آنسو آنسو جس نے دریا پار کئے

    قطرہ قطرہ آب میں الجھا بیٹھا ہے

    بھول کے جوہری اپنے لعل و جواہر کو

    شوق در نایاب میں الجھا بیٹھا ہے

    وہ جو بگولا بن کر اڑتا پھرتا تھا

    دھاگا دھاگا سراب میں الجھا بیٹھا ہے

    نصف نہار پہ یوں لگتا ہے سورج بھی

    وقت کی آب و تاب میں الجھا بیٹھا ہے

    یاد کتاب شوق نہ ہوگی ختم کبھی

    انساں اک اک باب میں الجھا بیٹھا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : TASTEER (Pg. 166)
    • Author : Nasiir Ahmed Nasir
    • مطبع : Room No.1, 1st Floor, Awaan Plaza, Shadmaan Market, Lahore (Issue No. 3 October/December. 1997)
    • اشاعت : Issue No. 3 October/December. 1997

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY