جسم سے رہ گزر بناتے ہیں

صباحت عروج

جسم سے رہ گزر بناتے ہیں

صباحت عروج

MORE BYصباحت عروج

    جسم سے رہ گزر بناتے ہیں

    آ محبت کو شر بناتے ہیں

    صرف دیوار و در بناتے ہیں

    اور دعویٰ ہے گھر بناتے ہیں

    خود کو بار دگر بناتے ہیں

    اور اب سوچ کر بناتے ہیں

    آج لکڑی کے جوڑ کر تختے

    ڈوب جانے کا ڈر بناتے ہیں

    جن کے پاؤں وہ کاٹ لیتے ہیں

    ان کے جسموں پہ سر بناتے ہیں

    یہ لٹیرے ہی میرے محسن ہیں

    بند گلیوں میں در بناتے ہیں

    اس نے اڑنا ہے اور سمتوں میں

    آئیے بال و پر بناتے ہیں

    ہم نے جانا نہیں کہیں بھی تو

    کیوں یہ راہ سفر بناتے ہیں

    اب صباحتؔ خدا بنے ہیں وہ

    اب وہ شمس و قمر بناتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY