جتنے تھے ترے جلوے سب بن گئے بت خانے

جوشؔ ملسیانی

جتنے تھے ترے جلوے سب بن گئے بت خانے

جوشؔ ملسیانی

MORE BY جوشؔ ملسیانی

    جتنے تھے ترے جلوے سب بن گئے بت خانے

    اب چشم تماشائی کیوں کر تجھے پہچانے

    اسرار حقیقت کے سمجھے نہیں فرزانے

    تقصیر تو تھی ان کی مارے گئے دیوانے

    مستان محبت نے دنیا میں یہی دیکھا

    ٹوٹے ہوئے پیمانے ٹوٹے ہوئے مے خانے

    پھولوں کی ہنسی سے بھی دل جن کا نہیں کھلتا

    ان کو بھی ہنساتے ہیں ہنستے ہوئے پیمانے

    وہ حال سناؤں کیا جو غیر مکمل ہے

    اب تک کی تو میں جانوں آگے کی خدا جانے

    جھگڑا نہ کبھی اٹھتا تو تو نہ کبھی ہوتی

    کچھ شیخ ہے دیوانہ کچھ رند ہیں دیوانے

    وہ مجھ پہ کرم فرما ہوگا کہ نہیں ہوگا

    یا اس کو خدا جانے یا میری قضا جانے

    ہم کہتے رہے جب تک روداد محبت کی

    ہنستے رہے فرزانے روتے رہے دیوانے

    سمجھا تھا جنہیں اپنا جب ان کی روش یہ ہے

    اوروں کی شکایت کیا بیگانے تو بیگانے

    وحشت تو نہیں مجھ کو اے جوشؔ مگر پھر بھی

    یاد آتے ہیں رہ رہ کر چھوڑے ہوئے ویرانے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY