جیے جائیں گے ہم بھی لب پہ دم جب تک نہیں آتا

شاد عظیم آبادی

جیے جائیں گے ہم بھی لب پہ دم جب تک نہیں آتا

شاد عظیم آبادی

MORE BYشاد عظیم آبادی

    جیے جائیں گے ہم بھی لب پہ دم جب تک نہیں آتا

    ہمیں بھی دیکھنا ہے نامہ بر کب تک نہیں آتا

    پہنچنا تھا جو عرض حال کو عرش معظم تک

    کئی شب سے وہی نالہ مرے لب تک نہیں آتا

    دل اپنا وادئ غربت میں شاید مر رہا جا کر

    نہ آنے کی بھی اک میعاد ہے کب تک نہیں آتا

    وہاں اوروں کے قصوں کو بھی سن کر وہ کھٹکتے ہیں

    یہاں اپنی زباں پر حرف مطلب تک نہیں آتا

    یہاں تک سینہ تنگی سے ضعیف و زار ہے نالہ

    چلا جو صبح کو وہ تا بہ لب شب تک نہیں آتا

    جہاں تمہید کی وہ اور قصے چھیڑ دیتا ہے

    کسی صورت سے ظالم حرف مطلب تک نہیں آتا

    بلا بھیجیں نہ جب تک شادؔ کو وہ اپنے کوچے میں

    اجارہ ہے ترا اے شوق ہاں تب تک نہیں آتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY