جو نہ گلشن نہ گلابوں سے نکل کر آئے

آر پی شوخ

جو نہ گلشن نہ گلابوں سے نکل کر آئے

آر پی شوخ

MORE BYآر پی شوخ

    جو نہ گلشن نہ گلابوں سے نکل کر آئے

    وہ تو خوشبو ہے جو خوابوں سے نکل کر آئے

    اتنی رنگیں تو نہیں ہوتی قبا کیا ہوگا

    گر مرا چاند سحابوں سے نکل کر آئے

    غم کے تارے بھی بجھے جاتے ہیں اس سے کہہ دو

    صورت صبح حجابوں سے نکل کر آئے

    زندگی اب تو ترا شہر حقائق یہ کہے

    کوئی صحرا نہ سرابوں سے نکل کر آئے

    کبھی وہ بھی تو ثنا خواں ہو کہ جس کی خاطر

    اتنے خوں‌ ریز عذابوں سے نکل کر آئے

    جب کوئی لفظ ترے پیار کے قابل نہ ملا

    کوئی معنی نہ کتابوں سے نکل کر آئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے