جو سمجھاتے بھی آ کر واعظ برہم تو کیا کرتے

مجروح سلطانپوری

جو سمجھاتے بھی آ کر واعظ برہم تو کیا کرتے

مجروح سلطانپوری

MORE BYمجروح سلطانپوری

    جو سمجھاتے بھی آ کر واعظ برہم تو کیا کرتے

    ہم اس دنیا کے آگے اس جہاں کا غم تو کیا کرتے

    حرم سے مے کدے تک منزل یک عمر تھی ساقی

    سہارا گر نہ دیتی لغزش پیہم تو کیا کرتے

    جو مٹی کو مزاج گل عطا کر دیں وہ اے واعظ

    زمیں سے دور فکر جنت آدم تو کیا کرتے

    سوال ان کا جواب ان کا سکوت ان کا خطاب ان کا

    ہم ان کی انجمن میں سر نہ کرتے خم تو کیا کرتے

    جہاں مجروحؔ دل کے حوصلے ٹوٹیں نگاہوں سے

    وہاں کرتے بھی مرگ شوق کا ماتم تو کیا کرتے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY