جو طوفانوں میں پلتے جا رہے ہیں

جگر مراد آبادی

جو طوفانوں میں پلتے جا رہے ہیں

جگر مراد آبادی

MORE BYجگر مراد آبادی

    جو طوفانوں میں پلتے جا رہے ہیں

    وہی دنیا بدلتے جا رہے ہیں

    نکھرتا آ رہا ہے رنگ گلشن

    خس و خاشاک جلتے جا رہے ہیں

    وہیں میں خاک اڑتی دیکھتا ہوں

    جہاں چشمے ابلتے جا رہے ہیں

    چراغ دیر و کعبہ اللہ اللہ

    ہوا کی ضد پہ جلتے جا رہے ہیں

    شباب و حسن میں بحث آ پڑی ہے

    نئے پہلو نکلتے جا رہے ہیں

    RECITATIONS

    خالد مبشر

    خالد مبشر

    خالد مبشر

    جو طوفانوں میں پلتے جا رہے ہیں خالد مبشر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY