جنون شوق محبت کی آگہی دینا

علقمہ شبلی

جنون شوق محبت کی آگہی دینا

علقمہ شبلی

MORE BYعلقمہ شبلی

    جنون شوق محبت کی آگہی دینا

    خودی بھی جس پہ ہو قرباں وہ بے خودی دینا

    نہ شور چاہئے دریا کی تند موجوں کا

    مرے لہو کو سمندر کی خامشی دینا

    تو دے نہ دے مرے لب کو شگفتگی گل کی

    جو دے سکے تو شگوفے کی بیکلی دینا

    شناخت جس سے زمانے میں آدمی کی ہے

    یہ التجا ہے کہ تو مجھ کو وہ خودی دینا

    جھکا سکے نہ مرا سر کوئی بھی قدموں پر

    جو ہو سکے تو مجھے تو وہ سرکشی دینا

    نقاب الٹ دے جو بڑھ کر رخ تمنا سے

    یہ آرزو ہے کہ مجھ کو وہ تشنگی دینا

    نئی جہات سے فن کو جو آشنا کر دے

    مرے قلم کو خدایا وہ کج روی دینا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY