کعبہ سے مجھ کو لائے سواد کنشت میں

منیرؔ  شکوہ آبادی

کعبہ سے مجھ کو لائے سواد کنشت میں

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    کعبہ سے مجھ کو لائے سواد کنشت میں

    اصلاح دی بتوں نے خط سر نوشت میں

    پھرتے ہیں کوچۂ بت قدسی سرشت میں

    دیوانے لاتیں مار رہے بہشت میں

    کفارۂ شراب میں دیتا ہوں نقد ہوش

    سرگرم ہوں تلافیٔ اعمال زشت میں

    اکثر جزائے سجدہ میں کھانی ہیں ٹھوکریں

    لکھا ہے کیا خط کف پا سر نوشت میں

    حوروں سے گرمیاں جو کہوں اس شریر کی

    لگ جائے آگ آتش گل سے بہشت میں

    سنتی ہے روز نغمۂ زنجیر عاشقاں

    وہ زلف بھی ہے سلسلۂ اہل چشت میں

    زنداں سے آنکھیں سینکنے اس گل کے گھر گئے

    دوزخ سے آگ لینے چلے ہم بہشت میں

    بیگانے اک ہمیں نظر آئے پس فنا

    بے دردوں کا ہجوم ہے باغ بہشت میں

    بت خانے میں سفیدیٔ حسن فرنگ ہے

    گرجے کی روشنی ہے سواد کنشت میں

    جل جل کے خاک ہوتے ہیں بے اشک و آہ ہم

    آب و ہوا نہیں ہے ہماری سرشت میں

    گرمی میں تیرے کوچہ نشینوں کے واسطے

    پنکھے ہیں قدسیوں کے پروں کے بہشت میں

    سونا کساؤں اشرفی داغ سجدہ کا

    سنگ محک لگاؤں بنائے کنشت میں

    بجلی چمک گئی جو ہنسی میں پھڑک گئے

    شوخی بھری ہوئی ہے تمہاری سرشت میں

    تصویریں تیری دست حنائی کی لے گئے

    چھاپے لہو کے ہم نے لگائے بہشت میں

    کرتی ہیں خون چرخ بتوں کی تعلیاں

    رنگ شفق لگاتی ہے سقف کنشت میں

    ابر بہار جوہر شمشیر یار تھے

    گلہائے زخم کھل گئے اردی بہشت میں

    تقدیر میں ہے تیری دہان و کمر کا عشق

    سر نہاں لکھا ہے مری سر نوشت میں

    دی جان ایک حور کے بوسے کی چاٹ پر

    قسمت نے مجھ کو زہر دیا ہے بہشت میں

    چوروں سے گفتگوئے خط سبز یار ہے

    طوطی کسی کا بول رہا ہے بہشت میں

    ادنیٰ غلام شاہ ولایت ہوئے منیرؔ

    دشت نجف کی خاک ہے میری سرشت میں

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY