کام آخر جذبۂ بے اختیار آ ہی گیا

جگر مراد آبادی

کام آخر جذبۂ بے اختیار آ ہی گیا

جگر مراد آبادی

MORE BYجگر مراد آبادی

    کام آخر جذبۂ بے اختیار آ ہی گیا

    دل کچھ اس صورت سے تڑپا ان کو پیار آ ہی گیا

    جب نگاہیں اٹھ گئیں اللہ ری معراج شوق

    دیکھتا کیا ہوں وہ جان انتظار آ ہی گیا

    ہائے یہ حسن تصور کا فریب رنگ و بو

    میں یہ سمجھا جیسے وہ جان بہار آ ہی گیا

    ہاں سزا دے اے خدائے عشق اے توفیق غم

    پھر زبان بے ادب پر ذکر یار آ ہی گیا

    اس طرح خوش ہوں کسی کے وعدۂ فردا پہ میں

    در حقیقت جیسے مجھ کو اعتبار آ ہی گیا

    ہائے کافر دل کی یہ کافر جنوں انگیزیاں

    تم کو پیار آئے نہ آئے مجھ کو پیار آ ہی گیا

    درد نے کروٹ ہی بدلی تھی کہ دل کی آڑ سے

    دفعتاً پردہ اٹھا اور پردہ دار آ ہی گیا

    دل نے اک نالہ کیا آج اس طرح دیوانہ وار

    بال بکھرائے کوئی مستانہ وار آ ہی گیا

    جان ہی دے دی جگرؔ نے آج پائے یار پر

    عمر بھر کی بے قراری کو قرار آ ہی گیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    مہدی حسن

    مہدی حسن

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY