کاش اس بت کو بھی ہم وقف تمنا دیکھیں

عروج زیدی بدایونی

کاش اس بت کو بھی ہم وقف تمنا دیکھیں

عروج زیدی بدایونی

MORE BYعروج زیدی بدایونی

    کاش اس بت کو بھی ہم وقف تمنا دیکھیں

    برف کی سل سے نکلتا ہوا شعلہ دیکھیں

    جن کو منزل طلبی میں ہو تلاش رہبر

    رہنمائی کو مرے نقش کف پا دیکھیں

    پاؤں کی روندی ہوئی خاک ہے اپنے سر پر

    ہم نے چاہا تھا کہ عالم تہہ و بالا دیکھیں

    نرم اور گرم نگاہی پہ نہیں اپنی نظر

    تیرے ہوتے ترا انداز نظر کیا دیکھیں

    اپنا غم بھی غم دنیا کے برابر ہے عروجؔ

    اپنا غم بھول سکیں تو غم دنیا دیکھیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY