کاتب تقدیر میرے حق میں کچھ تحریر ہو

راغب اختر

کاتب تقدیر میرے حق میں کچھ تحریر ہو

راغب اختر

MORE BYراغب اختر

    کاتب تقدیر میرے حق میں کچھ تحریر ہو

    رنج ہو یا شادمانی کچھ تو دامن گیر ہو

    آب رود زیست کے کچھ گھونٹ زہریلے بھی ہوں

    میں نے کب چاہا تھا ہر قطرہ مجھے اکسیر ہو

    عہد آزادی سے بہتر قید زنداں ہو تو پھر

    توڑ دینے کی قفس کو کیوں کوئی تدبیر ہو

    تیز لہریں آ ہی جاتی ہیں مٹانے کے لیے

    جب لب ساحل گھروندا ریت کا تعمیر ہو

    غم رہے پنہاں در و دیوار دل کے درمیاں

    کیا ضروری ہے کہ کرب زیست کی تشہیر ہو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY