aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

کب قابل تقلید ہے کردار ہمارا

حیات لکھنوی

کب قابل تقلید ہے کردار ہمارا

حیات لکھنوی

MORE BYحیات لکھنوی

    کب قابل تقلید ہے کردار ہمارا

    ہر لمحہ گزرتا ہے خطا‌ وار ہمارا

    مرنا بھی جو چاہیں تو وہ مرنے نہیں دے گا

    جینا بھی کیے رہتا ہے دشوار ہمارا

    اچھا ہے ادھر کچھ نظر آتا نہیں ہم کو

    جو کچھ بھی ہے وہ سب پس دیوار ہمارا

    اک روز تو یہ فاصلہ طے کر کے رہیں گے

    ہے کب سے کوئی منتظر اس پار ہمارا

    ہم کو یہ خوشی ہے کہ ادھر آئے تو پتھر

    ہے شہر میں کوئی تو طلب گار ہمارا

    کوئی تو یہ تنہائی کا احساس مٹائے

    کوئی تو نظر آئے طرفدار ہمارا

    ہم نے تو حیاتؔ آس لگائی ہے خدا سے

    ہے اس کے سوا کون مددگار ہمارا

    مأخذ:

    Rooh-e-Ghazal,Pachas Sala Intekhab (Pg. 380)

      • اشاعت: 1993
      • ناشر: انجمن روح ادب، الہ آباد
      • سن اشاعت: 1993

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے