کب تصور یار گل رخسار کا فعل عبث

بہرام جی

کب تصور یار گل رخسار کا فعل عبث

بہرام جی

MORE BYبہرام جی

    کب تصور یار گل رخسار کا فعل عبث

    عشق ہے اس گلشن و گل زار کا فعل عبث

    نکہت گیسوئے خوباں نے کیا بے قدر اسے

    اب ہے سودا نافۂ تاتار کا فعل عبث

    رشتۂ الفت رگ جاں میں بتوں کا پڑ گیا

    اب بظاہر شغل ہے زنار کا فعل عبث

    آرزو مند شہادت عاشق صادق ہوئے

    غیر کو ڈر ہے تری تلوار کا فعل عبث

    جب دل سنگیں دلاں میں کچھ اثر ہوتا نہیں

    گریہ ہے اس دیدۂ خوں بار کا فعل عبث

    خواب میں بھی یار کو اس کا خیال آتا نہیں

    جاگنا تھا دیدۂ بے دار کا فعل عبث

    خالی از حکمت ہوا بہرامؔ کب فعل حکیم

    کام کب ہے داور دادار کا فعل عبث

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے