کبھی جو میں نے مسرت کا اہتمام کیا

خمارؔ بارہ بنکوی

کبھی جو میں نے مسرت کا اہتمام کیا

خمارؔ بارہ بنکوی

MORE BY خمارؔ بارہ بنکوی

    کبھی جو میں نے مسرت کا اہتمام کیا

    بڑے تپاک سے غم نے مجھے سلام کیا

    ہزار ترک تعلق کا اہتمام کیا

    مگر جہاں وہ ملے دل نے اپنا کام کیا

    زمانے والوں کے ڈر سے اٹھا نہ ہاتھ مگر

    نظر سے اس نے بصد معذرت سلام کیا

    کبھی ہنسے کبھی آہیں بھریں کبھی روئے

    بقدر مرتبہ ہر غم کا احترام کیا

    ہمارے حصے کی مے کام آئے پیاسوں کے

    ز راہ خیر گناہ شکست جام کیا

    طلوع مہر سے بھی گھر کی تیرگی نہ گھٹی

    اک اور شب کٹی یا میں نے دن تمام کیا

    دعا یہ ہے نہ ہوں گمراہ ہم سفر میرے

    خمارؔ میں نے تو اپنا سفر تمام کیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY