کبھی تم بھیگنے آنا مری آنکھوں کے موسم میں

فرح اقبال

کبھی تم بھیگنے آنا مری آنکھوں کے موسم میں

فرح اقبال

MORE BYفرح اقبال

    کبھی تم بھیگنے آنا مری آنکھوں کے موسم میں

    بنانا مجھ کو دیوانہ مری آنکھوں کے موسم میں

    برستا بھیگتا ہو جب کوئی لمحہ نگاہوں میں

    وہیں تم بھی ٹھہر جانا مری آنکھوں کے موسم میں

    کئی موسم گزارے ہیں انہوں نے دھوپ چھاؤں کے

    نیا موسم کوئی لانا مری آنکھوں کے موسم میں

    سنہری دھوپ پھیلی ہو کہیں یادوں کے جنگل میں

    تو کرنیں بن کے مسکانا مری آنکھوں کے موسم میں

    کبھی دو چار ہو جائیں مری نظریں جو تم سے تو

    چھلک جائے گا پیمانہ مری آنکھوں کے موسم میں

    مری آنکھوں کے سب موسم ہیں تنہائی سے گھبرائے

    نہ تنہا چھوڑ کر جانا مری آنکھوں کے موسم میں

    ہیں یوں تو فاصلے کتنے زمانوں کے مکانوں کے

    مگر ملتے ہو روزانہ مری آنکھوں کے موسم میں

    مأخذ :
    • کتاب : Koi bhi rut ho (Pg. 65)
    • Author : Farah iqbal
    • مطبع : Alhamd Publications (2011)
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY