کہیں جو عزم ذرا حوصلہ نکل آئے

نبیل احمد نبیل

کہیں جو عزم ذرا حوصلہ نکل آئے

نبیل احمد نبیل

MORE BYنبیل احمد نبیل

    کہیں جو عزم ذرا حوصلہ نکل آئے

    فصیل غم سے نیا راستا نکل آئے

    نہ پوچھ مجھ سے تو اس حسن دل ربا کی کشش

    جدھر بھی دیکھے وہاں آئنہ نکل آئے

    کسی نواح کی بھی بات ہو مگر اے دوست

    میان بزم ترا تذکرہ نکل آئے

    میں مانتا ہوں نہیں تجھ سا دوسرا کوئی

    کوئی جو تیرے سوا دوسرا نکل آئے

    سناں کی نوک پہ آ جائے گر مرا سر بھی

    فلک سے اونچا مرا مرتبہ نکل آئے

    میں اس خدائی میں زندہ ہوں اک زمانے سے

    ہر اک گلی سے نیا اک خدا نکل آئے

    نبیلؔ اس لیے میں عاشقی سے باز آیا

    جسے بھی پیار کروں بے وفا نکل آئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY