کہنے میں نہیں ہیں وہ ہمارے کئی دن سے

مرزا شوقؔ  لکھنوی

کہنے میں نہیں ہیں وہ ہمارے کئی دن سے

مرزا شوقؔ  لکھنوی

MORE BYمرزا شوقؔ  لکھنوی

    کہنے میں نہیں ہیں وہ ہمارے کئی دن سے

    پھرتے ہیں انہیں غیر ابھارے کئی دن سے

    جلوے نہیں دیکھے جو تمہارے کئی دن سے

    اندھیرے ہیں نزدیک ہمارے کئی دن سے

    بے صبح نکلتا نہیں وو رات کو گھر سے

    خورشید کے انداز ہیں سارے کئی دن سے

    ہم جان گئے آنکھ ملاؤ نہ ملاؤ

    بگڑے ہوئے تیور ہیں تمہارے کئی دن سے

    کس چاک گریباں کا کیا آپ نے ماتم

    کپڑے بھی نہیں تم نے اتارے کئی دن سے

    دیوانہ ہے سودائی ہے فرماتے ہیں اکثر

    ان ناموں سے جاتے ہیں پکارے کئی دن سے

    دل پھنس گیا ہے آپ کی زلفوں میں ہمارا

    ہیں بندۂ بے دام تمہارے کئی دن سے

    منہ گال پے رکھ دیتے ہیں سوتے میں چمٹ کر

    کچھ کچھ تو حیا کم ہوئی بارے کئی دن سے

    مہندی بھی ہے مسی بھی ہے لاکھا بھی ہے لب پر

    کچھ رنگ ہیں بے رنگ تمہارے کئی دن سے

    ڈر سے ترے کاکل کے نہیں چلتے ہیں رستہ

    دم بند ہیں اس سانپ کے مارے کئی دن سے

    آخر مری آہوں نے اثر اپنا دکھایا

    گھبرائے ہوئے پھرتے ہو پیارے کئی دن سے

    کس کشتۂ کاکل کا رکھا سوگ مری جاں

    گیسو نہیں کیوں تم نے سنوارے کئی دن سے

    پامال کرو گے کسی وارفتہ کو اپنے

    اٹکھیلیاں ہیں چال میں پیارے کئی دن سے

    اک شب مرے گھر آن کے مہمان رہے تھے

    آئے نہیں اس شرم کے مارے کئی دن سے

    پھر شوقؔ سے کیا اس بت عیار سے بگڑی

    ہوتے نہیں باہم جو اشارے کئی دن سے

    مأخذ :
    • کتاب : Intekhab-e-Zarrin Urdu Ghazal (Pg. 110)
    • Author : Khvaja Mohammad Zakriya
    • مطبع : Sangat Publishers (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY