کہتا ہے باغبان لہٰذا نہ چاہئے

شاد عارفی

کہتا ہے باغبان لہٰذا نہ چاہئے

شاد عارفی

MORE BYشاد عارفی

    کہتا ہے باغبان لہٰذا نہ چاہئے

    ورنہ چمن کا حال چھپانا نہ چاہئے

    اس مشورہ کے ساتھ کہ چرچا نہ چاہئے

    دل کہہ رہا ہے ان پہ بھروسہ نہ چاہئے

    پڑ جائے خد و خال مناظر پہ روشنی

    اتنے قریب سے بھی نظارہ نہ چاہئے

    ہم غور کر رہے ہیں تو محفل ہے فکر میں

    اٹھنا نہ چاہئے کہ اٹھانا نہ چاہئے

    دستور ہے گزارش احوال واقعی

    قانون یہ نہیں ہے کہ شکوہ نہ چاہئے

    طوفان انقلاب سے مایوسیوں کے بعد

    کشتی پکارتی ہے کنارا نہ چاہئے

    گل ہائے رنگ رنگ میں ٹھنتی نہیں کبھی

    ہم کو بھی اس لحاظ سے جھگڑا نہ چاہئے

    کٹتی ہے آرزو کے سہارے پہ زندگی

    کیسے کہوں کسی کی تمنا نہ چاہئے

    میرا قصور یہ ہے کہ حب وطن میں شادؔ

    لکھتا ہوں لکھ چکا ہوں جو لکھنا نہ چاہئے

    مأخذ :
    • کتاب : mahvar (Pg. 83)
    • Author : narendar nashchal
    • مطبع : kohi noor paress lalkunvan delhi

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY