کیسی نظروں سے تکتے ہو تم بھی نا

حنا علی

کیسی نظروں سے تکتے ہو تم بھی نا

حنا علی

MORE BYحنا علی

    کیسی نظروں سے تکتے ہو تم بھی نا

    پھر انجان سے بن جاتے ہو تم بھی نا

    وصل کی خواہش سے لبریز تمہارا دل

    پھر بھی جانے کا کہتے ہو تم بھی نا

    جذبوں کا طوفان چھپا ہے سینے میں

    لیکن پھر بھی چپ رہتے ہو تم بھی نا

    دل کی بات لبوں پر لے آتے ہو تم

    لیکن بات بدل دیتے ہو تم بھی نا

    شاعرہ ہونے پر تم میرے خوش نہیں پر

    دل ہی دل میں خوش ہوتے ہو تم بھی نا

    جانے والا آ نہیں سکتا پتہ بھی ہے

    پھر بھی رستہ دیکھ رہے ہو تم بھی نا

    اندر کا پگھلاؤ آنکھ سے بہہ نکلا

    لیکن پتھر بنے ہوئے ہو تم بھی نا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY