کل رات دل میں یادوں کا میلہ لگا رہا

ابرار عابد

کل رات دل میں یادوں کا میلہ لگا رہا

ابرار عابد

MORE BYابرار عابد

    کل رات دل میں یادوں کا میلہ لگا رہا

    ماضی کو چشم حال سے میں دیکھتا رہا

    تیرے بغیر جی تو نہ سکتے تھے ہم مگر

    غم تیرا زندگی کا سہارا بنا رہا

    منہ میں زباں نہ رکھتے تھے تیری گلی کے لوگ

    میں پتھروں سے تیرا پتا پوچھتا رہا

    زندان احتیاط میں گزری تمام عمر

    میں جرم آگہی کی سزا کاٹتا رہا

    شل ہو گیا وجود تو عابدؔ کھلا یہ بھید

    میں جس کو ڈھونڈھتا تھا وہ مجھ میں چھپا رہا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY