Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

کم ظرف بھی ہے پی کے بہکتا بھی بہت ہے

سجاد باقر رضوی

کم ظرف بھی ہے پی کے بہکتا بھی بہت ہے

سجاد باقر رضوی

MORE BYسجاد باقر رضوی

    کم ظرف بھی ہے پی کے بہکتا بھی بہت ہے

    بھرتا بھی نہیں اور چھلکتا بھی بہت ہے

    اللہ کی مرضی کا تو سختی سے ہے پابند

    حاکم کی رضا ہو تو لچکتا بھی بہت ہے

    کوتاہ قدی کہتی ہے کھٹے ہیں یہ انگور

    لیکن گہ و بے گاہ لپکتا بھی بہت ہے

    پروا ہے نہ کچھ تال کی نے سر کی خبر ہے

    پر ساز پہ دنیا کے مٹکتا بھی بہت ہے

    شوریدگی بڑھتی ہے در لیلی زر پر

    دیوار پہ یہ سر کو پٹکتا بھی بہت ہے

    محفل میں تو سنیے ہوس جاہ پہ تقریر

    پہلو میں یہی خار کھٹکتا بھی بہت ہے

    باقرؔ جو بھٹکتا ہے معانی کے سفر میں

    ہو صورت زیبا تو اٹکتا بھی بہت ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Baqir (Pg. 272)
    • Author : Sajjad Baqir Rizvi
    • مطبع : Sayyed Mohammad Ali Anjum Rizvi (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے