کماں پہ چڑھ کے بہ‌ شکل خدنگ ہونا پڑا

ضمیر اترولوی

کماں پہ چڑھ کے بہ‌ شکل خدنگ ہونا پڑا

ضمیر اترولوی

MORE BYضمیر اترولوی

    کماں پہ چڑھ کے بہ‌ شکل خدنگ ہونا پڑا

    حریف امن سے مصروف جنگ ہونا پڑا

    یہاں تھی دشمنی انساں سے پیار پتھر سے

    مجھے بھی آخرش اک روز سنگ ہونا پڑا

    حسد کی آگ میں جل جل کے لوگ مرنے لگے

    مجھے سمیٹ کے وسعت کو تنگ ہونا پڑا

    رہا جو بر سر پیکار میں مقدر سے

    تو اس حریف کو حیران‌ و دنگ ہونا پڑا

    زمانہ روز مرا ضبط آزماتا تھا

    مرے مزاج کو یوں شعلہ رنگ ہونا پڑا

    بہت غرور تھا پیراک ہونے کا جن کو

    انہیں ضمیرؔ شکار نہنگ ہونا پڑا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY