کروں نہ یاد مگر کس طرح بھلاؤں اسے

احمد فراز

کروں نہ یاد مگر کس طرح بھلاؤں اسے

احمد فراز

MORE BYاحمد فراز

    کروں نہ یاد مگر کس طرح بھلاؤں اسے

    غزل بہانہ کروں اور گنگناؤں اسے

    وہ خار خار ہے شاخ گلاب کی مانند

    میں زخم زخم ہوں پھر بھی گلے لگاؤں اسے

    یہ لوگ تذکرے کرتے ہیں اپنے لوگوں کے

    میں کیسے بات کروں اب کہاں سے لاؤں اسے

    مگر وہ زود فراموش زود رنج بھی ہے

    کہ روٹھ جائے اگر یاد کچھ دلاؤں اسے

    وہی جو دولت دل ہے وہی جو راحت جاں

    تمہاری بات پہ اے ناصحو گنواؤں اسے

    جو ہم سفر سر منزل بچھڑ رہا ہے فرازؔ

    عجب نہیں ہے اگر یاد بھی نہ آؤں اسے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    غلام علی

    غلام علی

    RECITATIONS

    فہد حسین

    فہد حسین

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    فہد حسین

    کروں نہ یاد مگر کس طرح بھلاؤں اسے فہد حسین

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY