کون ہے جو نہ ہوا بندش غم سے آزاد

ہربنس لال انیجہ جمالؔ

کون ہے جو نہ ہوا بندش غم سے آزاد

ہربنس لال انیجہ جمالؔ

MORE BY ہربنس لال انیجہ جمالؔ

    کون ہے جو نہ ہوا بندش غم سے آزاد

    جز مرے کون رہا دہر میں ناکام مراد

    سونپ دوں کیوں نہ بہ دامان تلاطم کشتی

    کس کی کب سنتے ہیں بے رحم کنارے فریاد

    مجھ سے مت چھین یہ جاگیر غم و رنج ندیم

    ہے فقط اس سے ہی کونین دل و جان آباد

    دل کے گلزار میں کھل اٹھتی ہے داغوں کی کلی

    جب بھی آتی ہے کسی گلرخ و گلفام کی یاد

    اب نہ ماضی ہی کا غم ہے نہ تو فردا کی خوشی

    خانۂ دل کو کیا تم نے کچھ ایسا برباد

    ایک لمحہ بھی مسرت کا میسر نہ ہوا

    جانے کس وقت محبت کی رکھی تھی بنیاد

    غم غلط کرنے کو آیا تھا ترے در پہ جمالؔ

    کیا خبر تھی کہ نہیں تو بھی غموں سے آزاد

    مآخذ:

    • کتاب : SAAZ-O-NAVA (Pg. 113)
    • مطبع : Raghu Nath suhai ummid

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY